کورونا وائرس لاہور

کورونا کی تیسری لہر لاہور میں تیزی سے انسانی زندگیاں نگل رہی ہے۔اٹھارہ اسپتالوں میں نوے فیصد وینٹی لیٹرز زیر استعمال ہیں۔
لاہوریوں کو بے احتیاطی مہنگی پڑگئی۔کورونا کی تیسری وبا شہر میں موت بانٹنے لگی۔مزید چونتیس زندگیوں کے چراغ گل کردیئے۔تیرہ سو دو مریض رپورٹ ہوئے۔وینٹی لیٹرز پر دو سو تینتیس مریض زندگی اور موت کی جنگ لڑرہے ہیں۔
شہر میں مریضوں اور اموات کی بڑھتی تعداد نے اسپتالوں پر دباؤ بڑھادیا ہے۔ضلعی انتظامیہ نے مختلف بازاروں میں ایس او پیز کی خلاف ورزیاں کرنے والوں کے خلاف ڈنڈا اٹھالیا۔ پچاس سے زائد دکانیں۔ہوٹل اور ریسٹورنٹس سیل کردیئے۔دوسو اکسٹھ افراد کے خلاف مقدمے درج کرلئے گئےکورونا کی تیسری لہر لاہور میں تیزی سے انسانی زندگیاں نگلنے لگی18 اسپتالوں میں90فیصد وینٹی لیٹرز زیر استعمال ہیں

صحت

کروناویکسینکیافادیتکوایکبارپھرایکبڑیطبیتحقیقکےذریعےثابتکردیاگیاہے،ریسرچمیںسامنےآیاہےکہویکسینکیایکخوراکسےگھرمیںوائرسکےپھیلاؤمیں50فیصدسےزائدکمیآجاتیہےپبلکہیلتھانگلینڈ(پیایچای)کیجانبسےشائعہونےوالیاستحقیقمیںکہاگیاہےکہفائزریاآسٹرازینیکاکیویکسینکیایکخوراکگھرمیںایکفردسےدیگرافرادمیںکروناکیمنتقلیکوپچاسفیصدسےبھیزیادہکمکردیتیہےریسرچکےدورانیہمعلومہواکہوہافرادجنھیںویکسینکیپہلیخوراکدیگئیتھی،جب3ہفتےبعدوہوائرسسےمتاثرہوئےتووہویکسیننہلینےوالوںکینسبتاپنےگھروالوںمیںکموائرسپھیلانےکاسبببنے۔اسطبیتحقیقمیں 24 ہزارگھروںکے57ہزارسےزائدافرادکےڈیٹاکاویکسیننہلگوانےوالےتقریباً10لاکھکیسزسےتقابلکیاگیا،اوریہنتیجہحاصلہواکہویکسینلینےوالےافراداپنےگھروںمیںویکسیننہلینےوالوںکینسبتنصفسےبھیکمتناسبسےوائرسپھیلاتےہیںبرطانویوزیرصحتمیٹہینکاکنےاستحقیقکےنتائجپربیاندیتےہوئےاسےایکشاندارخبرقراردیا،اورکہاکہہمپہلےہیجانتےتھےکہویکسینزندگیاںبچاتیہے،تاہمیہتحقیقحقیقیدنیاکاتفصیلیڈیٹاہے،جودکھارہیہےکہاسسےوائرسکاپھیلاؤبھیکمہوتاہےمیٹہنکاککاکہناتھاریسرچسےاسباتکوتقویتملیہےکہویکسینوباسےنکلنےکابہتریذریعہہے،یہآپکیاورآپکےگھروالوںکیحفاظتکرتیہے۔ایکاورطبیتحقیقمیںبھییہباتسامنےآئےتھیکہویکسینکیایکخوراککے 4 ہفتوںبعدوائرسپیداہونےکاخدشہ 65 فیصدسےزائدکمہوجاتاہے۔

صحت

رمضان المبارک کا دوسرا عشرہ جاری ،گرمی کی شدت ، شدید گرمی میں امراض پھیلنے کا خدشہ، مرغن کھانوں سے اجتناب کریں،ان گرمیوں میں کن غزاؤں کا استعمال کریں اور کن سے پرہیز کریں دیکھئے اس رپورٹ میں شدید گرمی میں امراض پھیلنے کا خدشہ رہتا ہے جن میں پیٹ کے امراض عام ہیں۔ماہرین صحت کا کہناہے کہ مرغن کھانوں سے اجتناب اورپھل،سبزیاں ،پانی اور ٹھنڈے مشروبات کا استعمال بڑھانے سے بیماریوں سے بچا جاسکتا ہے۔ماہرین صحت کا کہناہے کہ نوجوان اور بچے پکوڑے، سموسے، برگر اور باہر کی روغنی اشیاء زیادہ شوق سے کھاتے ہیں جس کی وجہ سے وہ ان بیماریوں سے زیادہ متاثر ہوتے ہیں۔ماہرین صحت کے مطابق شدید گرمی میں روغنی کھانے پینے کی اشیاء سے اجتناب برت کر پھلوں ، سبزیوں، ٹھنڈے مشروبات اور پانی کا زیادہ سے زیادہ استعمال کیا جائے، شدید گرمی میں ہیٹ اسٹروک کا خطرہ رہتا ہے جس میں متاثرہ فرد کو شدید پسینہ اور چکر آنے لگتے ہیں۔ڈاکٹرزکے مطابق مرغن اورچٹ پٹی غذاؤں کا استعمال معدے میں تیزابیت کا باعث بن سکتا ہے۔ شدید گرمی میں زیادہ گوشت کھانے سے بھی پیٹ خراب ہوسکتا ہے ۔شدید گرمی میں پیٹ کے امراض سے کیسے بچا جاسکتا ہے؟مشروبات کا استعمال بڑھانے سے بیماریوں سے بچا جاسکتا ہے شدید گرمی میں روغنی کھانے پینے کی اشیاء سے اجتناب کریں

کورونا

کورونا وائرس کی تیسری لہر کے باعث پاکستان بھی شدید متاثر، ملک میں وبا سے پہلی بار 200 سے زائد افراد جان سے گئے، 5292 نئے کیسز بھی رپورٹ پاکستان میں کورونا کے اعداد و شمار بتانے والی ویب سائٹ (covid.gov.pk) کے مطابق گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک بھر میں کورونا کے 49101 ٹیسٹ کیے گئے جس میں سے 5292 افراد میں کورونا وائرس کی تصدیق ہوئی جبکہ وائرس سے 201 افراد انتقال کر گئے۔سرکاری پورٹل کے مطابق ملک میں کورونا کے مثبت کیسز کی شرح10.77 فیصد رہی
سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ملک میں کورونا سے ہلاکتوں کی تعداد 17530 ہو گئی ہے اور مجموعی کیسز 8 لاکھ 10231 تک جاپہنچے ہیں جب کہ فعال کیسز کی تعداد 88207 ہے۔اس کے علاوہ 24 گھنٹوں کے دوران ملک بھر میں 4678 مریض کورونا سے صحتیاب بھی ہوئے جس کے بعد مجموعی طور پر صحتیاب ہونے والوں کی تعداد 7 لاکھ 4494 ہو گئی ہے۔