Pakistan

IH INFLATION

کراچی سمیت ملک کے بڑے شہروں میں اشیائے خوردونوش کی قیمتیں ۔اور ادارہ شماریات کے اعداوشمار میں واضع فرق سامنے آرہا ہے۔اسی طرح تجارت جیسے مقدس پیشے میں بھی زبردستی اور بدماشی کا عنصر غالب آنے کے باوجود انتظامیہ من مانی کرنے والوں کو لگام دینے میں بُری طرح ناکام ہے۔دُینا بھر میں جہاں رمضان سے پہلے روزہ داروں کیلئے آسانیاں پیدا کی جاتی ہیں وہیں پاکستان میں لاٹی گنگا بہنا کوئی نئی بات نہیں لیکن اس بار معاملہ زرا مختلف ہے۔اس بار حکومت کے نوٹیفکشن اور پرائس کنٹرول کے محکموں کی فہرستوں کو رد کیا جارہا ہے گزشتہ ہفتے سرکاری نوٹیفکیشن کے مطابق یوٹیلی اسٹور پر کوکنگ آئل کی قیمت میں 6 سے 9 روپے فی لیٹر اور گھی کی فی کلو قیمت میں 7 روپے کا اضافہ ہوا لیکن جن لوکل کمپنیوں کا گھی اور تیل یوٹی لیٹی اسٹورز پر دستیاب ہوتا ہے اسی کمپنی کا وہی گھی اور تیل کراچی ہول سیل مارکٹ میں چالس سے پچاس روپے فی لیٹر مہنگا ہوچکا۔اسی طرح گزشتہ ہفتے ادارہ شماریات کی رپورٹ کے مطابق ملک میں مہنگائی 7 ماہ کی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی اور مارچ کے مہینے میں مہنگائی بڑھ کر 9.05 فیصد تک ریکارڈ کی گئی ، سبزی اور اجناس کے جو نرخ بتائے یا جن کے مطابق دیٹا تیار کیا گیا وہ تو بازار میں سرے سے نہیں۔دوسری مثال دودھ کی ہے جس کے سب سے بڑے معاشی شہر کراچی میں سرکاری نرخ آج بھی پچانوے روپے لیٹر جبکہ حقیقت میں یہ نرخ ایک سو تیس روپے لیٹر ہے دودھ فرشوں کی ایسوسی ایشن نے دو ٹوک کہا اگر زبردستی سرکاری ریٹ کا اطلاق کرایا تو دودھ رمضان سے پہلے ایک سو چالیس روپے لیٹر ہوجائے گا، ادارہ شماریات رپورٹ کی لسٹ میں چکن کو ڈھائی سو روپے کلو مقررکر مہنگائی کی شرح نو اعشاریہ پانچ فیصد تک پہچ گئ۔دُینا بھر میں رمضان سے پہلے روزہ داروں کیلئے آسانیاں پاکستان میں مہنگائی کا طوفان حکومتی نوٹیفکیشن اور پرائس کنٹرول محکمے کی ریٹ لسٹ کی اہمیت کم ہونے لگی تجارت جیسے مقدس پیشے میں باقائدہ بدمعاشی کا عنصر غالب آگیا مارچ کے مہینے میں مہنگائی کی شرح9.05فیصد ریکارڈ ہوئی مہنگائی کی شرح ریکارڈ کرنے میں دودھ کی قیمت95روپے لیٹر رکھی گئی کراچی میں دودھ کی اضافی قیمت130روپے وصول کی جارہی ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *