Pakistan

CPEC

سیپیککےپاوررپروجیکٹسبھیگردشیقرضےسےمتاثرہوئےہیںجبکہحکومتواجبالادا 188اربروپےکیادائیگینہکرسکی سیپیکانرجیفریمورکایگریمنٹکےتحتپاکستانکوماہانہبلکے 22 فیصدکےمساویسیپیکریوالونگفنڈقائمکرناتھا پاکچیناقتصادیراہداری ( سیپیک ) کےپاورپروجیکٹسبھیگردشیقرضےسےمتاثرہوئےہیںاورحکومتواجبالادا188اربروپےکیادائیگینہیںکرسکیہےجودوطرفہانرجیفریمورکمعاہدےکیخلافورزیہےاگرچہواجبالادارقوممجموعیرقمکا18.4فیصدہیںتاہمانکیوجہسےسیپیکمعاہدےکےتحتقائمکردہآئیپیپیزکےچینیاسپانسرزکافنانسنگماڈلمتاثرہونےلگاہےوزیراعظمکےمعاونخصوصیبرائےتوانائیتابشگوہرنےایکسپریسٹریبیونسےگفتگوکرتےہوئےکہاکہپاکستانچینیآئیپیپیزکوبجلیکیخریدکےعوضابتک 832 اربروپےاداکرچکاہے۔ تاہمانکاکہناتھاکہسیٹرلپاورپرچیزایجنسیگارنٹیڈ (CPPA-G ) 188 اربروپےکلیئرنہیںکرسکی۔انکاکہناتھاکہواجبالادارقم 10.2کھربروپےکیمجموعیرقمکاصرف 18.4 فیصدہےاورکوئیزیادہبڑیرقمنہیںہے۔ انکاکہناتھاکہادائیگیوںکا 82 فیصدتناسباستناظرمیںبہتاچھاہےکہمجموعیگردشیقرض 26کھربروپےتکپہنچچکاہےسیپیکانرجیفریمورکایگریمنٹکےتحتپاکستانکوماہانہبلکے 22 فیصدکےمساویسیپیکریوالونگفنڈقائمکرناتھا۔ اسکامقصدیہتھاکہاگرخریدارادائیگیاںکرنےمیںناکامرہےتوچینیفرموںکواسفنڈسےادائیگیکردیجائے۔
تابشگوہرکاکہناتھاکہہمریوالونگفنڈقائمنہیںکرسکے۔ جون 2018ءمیںگردشقرض 11.5 کھربروپےتھاجواببڑھکر 26کھربروپےتکپہنچچکاہے۔ آئندہدوسالکےدورانگردشیقرضکوجون 2018ءکیسطحپرلانےکےلیےحکومتنےسہجہتیح کمتعمل یتشکیلدیہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *